اہر کی چُپ ٹوٹے عرشیؔ اندر بول اٹھے: غزل از ارشاد عرشیؔ ملک اسلام آباد
اہر کی چُپ ٹوٹے عرشیؔ اندر بول اٹھے
جس منظر میں وہ در آئے منظر بول اٹھے

مجھ میں پوشیدہ صورت کو آج رہائی دے
سنگ تراش کے ہاتھ میں آ کر پتھر بول اٹھے

آج چلو اک دوجے کو اصلی صورت میں دیکھیں
جو بھی جس کے جی میں آئے کھل کر بول اٹھے

اس سے جو کچھ طے کرنا ہے اس جیون میں کر لو
ایسا نہ ہو کل وہ روزِ محشر بول اٹھے

میرے گھر کا سونا پن پل میں رخصت ہو جائے
جب وہ گھر میں داخل ہو سارا گھر بول اٹھے

جسم و جاں کی ساری تلخی ہونٹوں پر آٹھہری
چُپ رہنے کی جی میں ٹھانی تھی پر بول اُٹھے

۲
اب محرومی آخری حد پر لوگوں کو لے آئی
کچھ دن میں تم دیکھو گے کہ اکثر بول اٹھے

میری اپنی جنگ مجھی کو تنہا لڑنی ہے
کون ہے جو اس شہر میں میری خاطر بول اٹھے

تیرا اپنا بوجھ بنے گا سب زخموں کا باعث
ننگے پیروں کے نیچے سب کنکر بول اٹھے

آج کُھلا یہ راز کہ عافیت تقلید میں ہے
پیر اٹھایا مرضی سے تو رہبر بول اٹھے

اُس نے کچھ نہ کہہ کر بھی عرشیؔ اپنی منوائی
آج بھی وہ نہ بولا اس کے تیور بول اٹھے

 دیر سے: نظم از ارشاد عرشی ملک
تعاقب میں میرے وطن کے لگی ہے ، کسی کی کوئی بددعا دیر سے
ہر اک سمت سے ڈھانپتی جا رہی ہے ، نحوست کی کالی گھٹا دیر سے

ہر اک شخص حق بات کہنے سے پہلے ، کن اکھیوں سے چاروں طرف دیکھتا ہے
مناسب سے الفاظ پھر ڈھونڈتا ہے ، بیاں کرتا ہے مدّعا دیر سے

امیر و وزیر اپنے اپنے مسلح محافظ کے نرغے میں سہمے ہوئے ہیں
ہر اک کو یہ ڈر کہ بشکلِ محافظ ، نہ پیچھے لگی ہو قضا دیر سے

یہاں عقل و ادراک دہشت زدہ ہیں ، یہاں حرفِ دانش کا چہرہ ہے پیلا
دلوں پر تعصب کی پردہ پڑا ہے ، نہیں آگہی کا پتہ دیر سے

ہر اک تُند خو اپنے ہاتھوں سے قانون و انصاف کی دھجیاں کر رہا ہے
خود اپنی بنائی عدالت میں بیٹھا دئیے جا رہا ہے سزا دیر سے

یہاں اپنی رائے کا اظہار کرنا ، ہے اک جُرم اور جُرم گردن کشی ہے
ضمانت نہ سر کی نہ ٹوپی کی کوئی ، یہی ہے چلن جا بجا دیر سے

شریعت کا ٹھیکہ تو مُلا نے اب سے کئی سو برس پیشتر لے لیا تھا
مگر پھر بھی میرا خدا لگ رہا ہے ، مجھے مولوی سے خفا دیر سے

شریعت کے ظاہر پہ عاشق ہے مُلا ، نہیں جانتا عصرِ نو کے تقاضے
سمجھتا ہے ڈنڈے کو ہر دُکھ کا دارو یہی بانٹتا ہے دوا دیر سے

یہاں روز ٹنگتے ہیں سر برچھیوں پر ، یہاں بین رہتا ہے دن رات جاری
یہاں ماؤرائے عدالت ہے برپا، نئے دور کی کربلا دیر سے

یہی مصلحت کا تقاضا ہے عرشیؔ کہ لب بھینچ لو یا وطن چھوڑ دو
تمہیں قتل کرنا تو اِک شغل ٹھہرا ، ہے جاری یہ مشقِ جفا دیر سے

 دوستو ۔۔! آنے کو ہے جو انقلاب
دوستو ۔۔! آنے کو ہے جو انقلاب
ارشاد عرشی ؔ ملک پاکستان

دوستو ۔۔!
آنے کو ہے جو انقلاب
کوئی بھی چینل اسے ’’لائیو ‘‘ دکھا نہ پائے گا
اس کا ریلا میڈیا کو بھی بہا لے جائے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر کے دروازوں پہ دستک دے رہا ہے رات دن
اب کسی بھی وقت بوتل سے نکلنے کو ہے جِن
ہر گھڑی نزدیک آتی جا رہی ہے اس کی چاپ
آہ و زاری میں بدل جانے کو ہے ڈھولک کی تھاپ
سب کا اس میں کچھ نہ کچھ کردار ہے ،میں ہوں کہ آپ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج تو پڑھ لیجئے دیوار پر لکھا ہوا
موت کا ڈر ہے رُخِ بیمار پر لکھا ہوا
تم سمجھتے ہو کہ وہ لے کر اجازت آئے گا؟
ٹیلی ویژن پر چلے گی اس کی آمد کی خبر؟
اک ’’بریکنگ نیوز ‘‘ جس کے ساتھ ہوں گے اشتہار؟
منتظر ہو تم کہ، اس دن چین سے آرام سے
ہاتھ میں تھامے ریموٹ
اس کے ہر اِک سین کو دیکھو گے’’ لائیو ‘‘ لیٹ کر
چُسکیاں کافی کی یا پیپسی کی لو گے ساتھ ساتھ
موڈ گر ہو گا تو پیزا ہٹ کا پیزا، کھاؤ گے
اور وقفے میں چلیں گے بے تکے سے اشتہار
شیمپوؤں کے اور سستے پیکجوں کے بے شمار
اور ایس ایم ایس کریں گے تم کو اس وقفے میں یار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوستو ۔۔!
آنے کو ہے جو انقلاب
کوئی بھی چینل اسے ’’لائیو ‘‘ دکھا نہ پائے گا
اس کا ریلا میڈیا کو بھی بہا لے جائے گا
وہ نہ ون ڈے میچ ہے نہ محفلِ شعر و سُخن
عا لموں کی موشگافی ہے، نہ کوئی مکر و فن
لانگ ٹیلی پلے نہیں ،ناں ہے ڈرامہ قسط وار
جس کا اگلے روز بھی تم کو ہو بے حد انتظار
وہ تو آگ اور خون کا اک سر پھرا سیلاب ہے
اس کا رستہ روکنے کی کب کسی میں تاب ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوستو ۔۔!
آنے کو ہے جو انقلاب
کوئی بھی چینل اسے ’’لائیو ‘‘ دکھا نہ پائے گا
اس کا ریلا میڈیا کو بھی بہا لے جائے گا
مشورے اور تبصرے سارے دھرے رہ جائیں گے
تجزئیے اس دن درازوں میں پڑے رہ جائیں گے
ڈھیر پر بارود کے بیٹھے ہو تم ،کس چین سے
کان میرے سُن رہے ہیں موت کے ،کچھ بَین سے
بانسری اس دن بجا نہ پائے گا نیرو کوئی
قتل ہر ہیرو کو کر ڈالے گا تب زیرو کوئی
کیا بتائیں ہم ،یہاں اب کیا سے کیا ہونے کو ہے
خوں کی بارش سارے نقشِ رائیگاں دھونے کو ہے
وہ ڈریں عرشیؔ کہ جن کے پاس کچھ کھونے کو ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوستو ۔۔!
آنے کو ہے جو انقلاب
کوئی بھی چینل اسے ’’لائیو ‘‘ دکھا نہ پائے گا
اس کا ریلا میڈیا کو بھی بہا لے جائے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Copyright © 2011-12 www.misgan.org. All Rights Reserved.