تقدیر میں رقم مری کرنا عطش عطش
حسن آتش ؔ مغربی بنگال
غزل
تقدیر میں رقم مری کرنا عطش عطش
دریاﺅں میں پکارتے پھرنا عطش عطش
یارب ترے جہان میں گزرے یوں روز و شب
جینا بھی تشنگی مری، مرنا عطش عطش
خونِ وفا سے پیاس بجھانا تری ادا
دارِ وفا سے میرا گزر نا عطش عطش
سیراب ہونا صحر ا نوردی سے اور کبھی
ساحل سے سمندر کے گزرنا عطش عطش
تا زندگی حیات کی آسودگی کی چاہ
لمحے میں ایک اس کا بکھرنا عطش عطش
جائے نہ تشنگی ¿ِ تمنّائے فکر و فن
آتش رہو، اگر ہے نکھرنا ، عطش عطش


Copyright © 2011-12 www.misgan.org. All Rights Reserved.