اس طرح دل پہ مسلط ہے رفاقت اس کی
  
سیما گپتا


غزل
اس طرح دل پہ مسلط ہے رفاقت اس کی
بند آنکھوں سے بھی کرتی ہوں زیارت اس کی

وہ طلبگار نہیں میرا تو ہرجائی سہی
میں نے ہر حال میں چاہی تھی محبت اس کی

دشمن ِ جاں ہے وہ کہنے کو ہمارا لیکن
اچھی لگتی ہے ہمیں دل سے عداوت اس کی

کیا عجب بات ہے وہ مجھکو نہیں مل پایا
پھر بھی سانسوں میں مہکتی ہے حرارت اس کی

میں نے اس شخص کو پلکوں پہ بٹھایا سیما
کبھی خود سے بھی نہیں کی ہے شکایت اس کی
Copyright © 2014-15 www.misgan.org. All Rights Reserved.