کون روتا ہے سرِشام سرہانے میرے
  
شوکت علی ناز ۔ دوحہ،قطر


غزل
کون روتا ہے سرِشام سرہانے میرے
آ گیا کون یہ غم اور بڑھانے میرے

کوئی خاموش کرے شور مچاتی سرگم
توڑنے آئی ہے کیوںخواب سہانے میرے

دن میں تتلی ، شبِ تاریک پکڑنا جگنو
کاش لوٹادے کوئی گزرے زمانے میرے

ہے تعاقب میں مرے پھر سے اُداسی کیونکر
کِس نے بتلائے بھلا اس کو ٹھکانے میرے

فکر و قرطاس و قلم کے ہیں احاطوں سے اُدھر
جتنے احسان کئے مجھ پہ خدا نے میرے

ناز یہ لمحہءغم ہے کہ گھڑی راحت کی
یاد آنے لگے احباب پرُانے میرے

شوکت علی ناز ۔ دوحہ،قطرموبائل
009745559583
Copyright © 2014-15 www.misgan.org. All Rights Reserved.